چین اورامریکی سائنسدانوں نے دماغی کینسر کے مریضوں کودوائی دینے کا ایک نیانظام وضع کرلیا

امریکی دارالحکومت کے شا ہراہ دستور پرچین(دائیں) اور امریکہ کے ساتھ ساتھ واشنگٹن ڈی سی کے پرچموں کا منظر۔(شِنہوا)

بیجنگ(شِنہوا) چین اورامریکہ کے سائنسدانوں نے دماغی کینسرکے مریضوں  کودوائی دینے کا ایک نیانظام  وضع کیا ہے جس سے ایسے مریضوں کے لیے مدافعتی علاج کو بہتر بنایاجا سکتا ہے۔

شان ڈونگ یونیورسٹی اور وسکونسن میڈیسن یونیورسٹی کے محققین نے انجیکشن سے دئے جانے والا ایک ہائیڈروجیل ڈیزائن کیا جس میں مرض کا سبب بننے والے گلیوما اسٹیم سیلزکوختم کرنے والےنینو پارٹیکلز شامل ہیں۔

آپریشن کے ذریعے  ابتدائی ٹیومر کونکالنے کے بعد،گلیوما اسٹیم سیلز دماغ میں انتہائی خطرناک ٹیومرکے بننے میں سب سے اہم کردار ادا کرتے ہیں۔

سائنس ٹرانسلیشنل میڈیسن جریدے میں رواں ہفتے شائع ہونے والی تحقیق کے مطابق، مجوزہ ہائیڈروجیل کے اندر موجود نینو پارٹیکلز دماغ کے متاثرہ حصے میں داخل ہونے کے بعد ٹی سیل( سی اے آر) پیدا کرسکتے ہیں ۔

یہ ٹی سیل بڑے خلیات ہیں جو جسم  کے اندر خون اورٹشو میں پائے جانے والے نقصان دہ مواد کو جسم سے باہرنکالنے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔