(ن) لیگ کا کے پی حکومت پر نیابالاکوٹ شہرکے کام کی جلد تکمیل پرزور

اسلام آباد(آئی این پی) قومی اسمبلی کو حکومت نے آگاہ کیا ہے کہ نیو بالاکوٹ سٹی منصوبے پر اب تک 30فیصد کام ہوا ہے جبکہ 70فیصد کام رہتا ہے یہ سوالیہ نشان ہے، بالاکوٹ شہر فالٹ لائن پر تھا ، حکومت نے فیصلہ کیا تھا کہ سارے شہر کو یہاں سے شفٹ کیا جائے گا،11ہزار 436کینال 16مرلے زمین حاصل کی گئی، 2005-06میں یہ فیصلہ ہوا، ابھی تک وہ منصوبہ مکمل نہیں ہوا ، صوبائی حکومت کی ذمہ داری ہے کہ فوری طور پر باقی 70 فیصد کام مکمل کیا جائے، سال2020-21میں36لاکھ 12ہزار638میٹرک ٹن گندم در آمد کی گئی جس کی مالیت 983.33ملین ڈالر ہے جبکہ سال 2021-22 میں جولائی سے جنوری تک17لاکھ66ہزار 762میڑک ٹن گندم درآمد کی گئی جس کی مالیت627.48ملین ڈالر ہے، گزشتہ تین سالوں کے دوران ٹی سی پی نے 434972میڑک ٹن چینی در آمد کی ،

ان خیالات کا اظہارقومی اسمبلی میں وقفہ سوالات کے دوران ارکان کے سوالوں کے جواب دیتے ہوئے وفاقی وزیر برائے پارلیمانی امور مرتضیٰ جاوید عباسی نے اور وزارت تجارت نے تحریری جوابات میں کیا۔بدھ کو قومی اسمبلی کا اجلاس اسپیکر قومی اسمبلی راجہ پرویز اشرف کی صدارت میں ہوا ، وقفہ سوالات کے دوران رکن اسمبلی مولانا عبدالاکبر چترالی کے سوال کے جواب میں وفاقی وزیر برائے پارلیمانی امور مرتضیٰ جاوید عباسی نے ایوان کو بتایا کہ بالاکوٹ شہر فالٹ لائن پر تھا ، حکومت نے فیصلہ کیا تھا کہ سارے شہر کو یہاں سے شفٹ کیا جائے گا،11ہزار 436کینال 16مرلے زمین حاصل کی گئی، 2005-06میں یہ فیصلہ ہوا، ابھی تک وہ منصوبہ مکمل نہیں ہوا ،تین ارب کا کام مکمل ہو چکا ہے، بہت سی وجوہات کی وجہ سے یہ منصوبہ مکمل نہیں ہو سکا،2019میں صوبائی حکومت نے ایک تجویز پیش کی کہ اس کو ٹورازم حب بنایا جائے،مرتضیٰ جاوید عباسی نے کہا کہ اب تک 30فیصد کام ہوا،70فیصد کام رہتا ہے یہ سوالیہ نشان ہے، صوبائی حکومت کی ذمہ داری ہے کہ فوری طور پر باقی 70 فیصد کام مکمل کیا جائے۔

رکن اسمبلی طاہرہ اورنگزیب کے سوال کے تحریری جواب میں وزارت تجارت نے ایوان کو بتایا کہ سال2020-21میں 3612638میٹرک ٹن گندم در آمد کی گئی جس کی مالیت 983.33ملین ڈالر ہے جبکہ سال 2021-22 میں جولائی سے جنوری تک 1766762میڑک ٹن گندم درآمد کی گئی جس کی مالیت627.48ملین ڈالر ہے ، وفاقی وزیر برائے تجارت نوید قمر نے ایوان کو بتایا کہ وزیر اعظم نے گندم کی اسمگلنگ کے مسئلے پر میٹنگ کی ہے ،انہوں نے کہا کہ ایک اور فیصلہ ہوا ہے کہ گودامز پر ٹریکرز لگائے جائیں، رکن اسمبلی شیخ روحیل اصغر کے سوال کے تحریری جواب میں وزارت تجارت نے ایوان کو بتایا کہ گزشتہ تین سالوں کے دوران ٹی سی پی نے 434972میڑک ٹن چینی در آمد کی ، سال 2020-21میں 130563میٹرک ٹن چینی درآمد کی گئی جو کہ الجیریا، مصر ، برازیل اور دوبئی یو اے ای سے درآمد کی گئی جبکہ سال 2021-22میں 304409میٹرک ٹن چینی درآمد کی گئی جوکہ دوبئی یو اے ای سے درآمد کی گئی ۔(ع ا)