چین اورپاکستان کے وزراعظم کادوطرفہ تعلقات پر تبادلہ خیال

بیجنگ(شِنہوا)  چین کے  وزیر اعظم لی کھ چھیانگ نے پاکستان کے وزیراعظم شہباز شریف سے فون پر دوطرفہ تعلقات پر تبادلہ خیال کیا ہے۔پیر کو فون کال میں لی نے کہا کہ چین اور پاکستان دوست پڑوسی ملک اور آہنی دوست ہیں اور یہ کہ صدرشی جن پھنگ نے 2015 میں پاکستان کا کامیاب دورہ کیا جس سے دوطرفہ اسٹریٹجک تعاون کو فروغ ملا ۔ لی نے کہا کہ چین ہمسایہ ممالک کے ساتھ اپنی سفارت کاری میں پاکستان کے ساتھ تعلقات کو ہمیشہ ترجیح دیتا ہے اورہمیشہ کی طرح قومی خودمختاری اورسلامتی کے دفاع میں پاکستان کی بھرپورحمایت اور اس کی معاشی ترقی، عوام کی زندگیوں کو بہتر بنانے اور مالی استحکام کو برقرار رکھنے میں مدد کرے گا۔

 چینی وزیراعظم نے  مزید کہا کہ ان کا ملک پاکستان کے ساتھ سٹریٹجک رابطوں کو مضبوط بنانے، چین پاکستان اقتصادی راہداری جیسے بڑے منصوبوں پر تعاون کو فروغ دینے اور وبا کی مؤثر روک تھام اور کنٹرول کی صورت میں دو طرفہ  عملی تبادلوں کو مضبوط بنانے کے لیے تیار ہے۔

لی نے بتایا  کہ کراچی میں چینی شہریوں پر حالیہ حملے سے ان کا ملک صدمے اور غم و غصے کی حالت میں اوروہ اس دہشت گرد حملے کی شدید مذمت کرتا ہے۔ چینی وزیر اعظم نے امید ظاہر کی کہ پاکستان مجرموں کو جلد از جلد انصاف کے کٹہرے میں لائے گا، اس واقعے کے بعد کے معاملات کوسدھارنے ، غمزدہ خاندانوں اور زخمیوں کی اشک شوئی  اور پاکستان میں چینی اداروں اور شہریوں کے حفاظتی اقدامات کو جامع طور پر مضبوط بنانے کے لیے ہر ممکن کوشش کرے گا تاکہ  ایسے سانحات دوبارہ وقع پزیر نہیں ہوں ۔ اس موقع پرشہباز شریف نے ایک بار پھر کراچی دہشت گرد حملے میں چینی شہریوں کی ہلاکت پر گہرے دکھ اور زخمیوں سے دلی ہمدردی کا اظہار کیا۔