بائیڈن کی چین بارے پالیسی توقع سے زیادہ نقصان دہ اور خطرناک ہے،میڈیا

واشنگٹن(شِنہوا)خارجہ پالیسی میگزین نے کہاہے کہ امریکی صدر جوبائیڈن کی انتظامیہ کی بنیادی خارجہ پالیسی صرف چین سے محاذآرائی کیلئے ہے اور یہ واشنگٹن کی سمجھ سے کہیں زیادہ خطرناک ہے۔

ایک  شائع ہو نے والے آ رٹیکل میں خبردار کیا گیا ہے کہ واشنگٹن کی شدید محاذ آرائی سے معاملات بدترین ہونے کاامکان ہے جبکہ امریکہ کے دیگر مفادات کو نقصان پہنچنے کا عمل جاری ہے۔

اس میں کہاگیاہے کہ بائیڈن انتظامیہ کے سفارتی اور معاشی اقدامات،سب کاایک ہی مقصد چین کے بڑھتے ہوئے بین الاقوامی اثرورسوخ کا مقابلہ کرنا،امریکی موقف اور استحکام کو فروغ دینا اورامریکی تجارتی پالیسی کا فائدہ اٹھانے سے چین کو روکنا ہے۔

آ رٹیکل میں مزید کہاگیاہے کہ انتظامیہ یہ شرط بھی لگارہی ہے کہ چین کے بارے میں اس طرح کے تصادم کے حا مل رویہ سے اسے سیاسی مدد مل سکتی ہے، جبکہ ریپبلکن حملوں اور امریکی رائے دہندگان کی حمایت حاصل کرنے کیلئے قوت حاصل ہو سکتی ہے۔

تاہم اس میں دلیل دی گئی کہ قلیل المدتی سیاست کو ایک طرف رکھتے ہوئے امکان ہے کہ انتظامیہ کی جانب سے بائیڈن کی چائنہ پالیسی مقرر کئے گئے دیگر اہداف حاصل نہیں کر سکے گی اور انتظامیہ کی زیادہ تر چین مخالف مہم آسانی سے ناکام ہوگی۔

اس کی وجہ یہ ہے کہ مہم میں شامل بہت سے اقدامات کو اندرون اور  بیرون ملک اتحادیوں کی حمایت کی ضرورت ہوگی اور مدد حاصل کرنا بہت مشکل ہے اور یہاں تک کہ اگر اتحادی اکٹھے ہو بھی جاتے ہیں تو بھی انتظامیہ کے بہت سے حالیہ اقدامات کم نہیں بلکہ دنیا کیلئے مزید خطرہ پیداکرنے والے اورامریکہ کیلئے خطرناک ہیں۔