چین،لاوس ریلوے لاوعوام کے لیے ایک قیمتی تحفہ ہے

بیجنگ وقت کے مطابق تین دسمبر کی شام چار بج کر چوالیس منٹ پر چین اور لاوس کے صدور کی ورچوئل ہدایات کی روشنی میں چین ۔ لاوس ریلوے پر آمدورفت کا باضابطہ آغاز ہو گیا ۔

چین۔لاؤس ریلوے منصوبہ "بیلٹ اینڈ روڈ” انیشیٹو کے تحت لاؤ عوام کو دیا گیا ایک قیمتی تحفہ ہے۔ اس سے قبل لاؤس میں تھائی لینڈ کو جانے والی3.5 کلومیٹر کی صرف ایک ریلوے تھی۔ چین -لاؤس ریلوے کی تعمیر پانچ سال میں مکمل کی گئی ہے اور اس کی کل لمبائی 1035 کلومیٹر ہے ۔اس ریلوے کی بدولت لاؤس کے دارالحکومت وینٹیانے سے چین اور لاؤس کے سرحدی علاقے تک سفر کا دورانیہ تقریباً اڑتالیس گھنٹے سے گھٹ کر صرف تین گھنٹے رہ گیا ہے۔یوں لاؤس نے تیز رفتار ریلوے کے دور میں قدم رکھا ہے۔

یہ ریلوے ترقی کے لامحدود مواقع پیدا کرے گی۔ لوگوں کے سفر میں آسانی کے علاوہ، ریلوے سے وابستہ علاقوں میں سیاحت ، زراعت، آبی وسائل کے استعمال اور شہر کاری کو بھی فروغ دیا جائے گا ، اور وینٹیانے جامع ترقیاتی زون اور چائنا-لاؤس اکنامک کوآپریشن زون سمیت اقتصادی پارکس کی ترقی میں مدد فراہم کی جائے گی ۔