وزیر اعظم عمران خان کے کامیاب دورے کے بعد گوادر ترقی کے نئے سفر پر گامزن

اسلام آ باد (آئی این پی ) چیئرمین سی پیک اتھارٹی عاصم سلیم باجوہ نے کہا ہے کہ گوادر پورٹ کی کامیاب فعالیت سے افغانستان کیساتھ ساتھ وسطی ایشیا اور روس تک تجارتی نیٹ ورکنگ میں وسعت آئی ہے پچھلے کچھ مہینوں کے دوران بندرگاہ پر 67000 میٹرک ٹن سے زیادہ سامان ہینڈل کیا گیا ،گوادر پورٹ دنیا کی تقریبا تمام بڑی بندرگاہوں کو جوڑ دے گی۔پورٹ اکانومی میں بنیادی ڈھانچہ کی تعمیر ہو رہی ہے گوادر فری زون پاکستان کا پہلا جدید صنعتی پارک ہے، اس سے نمایاں سرمایہ کاری اور ترقی ہو رہی ہے۔ گوادر پرو کے مطابق وزیر اعظم عمران خان کے کامیاب دورے کے بعد گوادر ترقی کے نئے سفر پر گامزن ہو گیا ، جیساکہ خوشحالی کی طرف گامز گوادر کے علاقے میں وعدے پورے ہونے کا سلسلہ جاری ہے ، عمران خان نے مختلف ترقیاتی منصوبوں پر پیشرفت کا جائزہ لیا اور ان کی موجودگی میںمفاہمتی یادداشتوں پر دستخط ہوئے ۔ ایک روزہ دورے کے دوران وزیر اعظم نے گوادر فری زون فیز ٹو کا سنگ بنیاد رکھا اور گوادر فرٹیلائزر پلانٹ ، گوادر اینیمل ویکسین پلانٹ ، ہینان ایگریکلچر انڈسٹریل پارک ، ہینگمے لبرکینٹ پلانٹ ، اور گوادر ایکسپو سینٹر جیسے بہت سے منصوبوں کا افتتاح کیا۔اس دورے کے دوران دستخط کیے گئے معاہدوں میں چین کی طرف سے روزانہ 1.2 ملین گیلن پانی صاف کرنے والے پلانٹ اور جنوبی بلوچستان کے لئے دیئے جانے والے سولرجنریٹرز پر عمل درآمد کیا گیا ۔ یہ پروگرام جنھیں گوادر کو فراہمی ، چین پاکستان اقتصادی راہداری کے با ضابطہ آغاز کے بعد گذشتہ آٹھ سالوں کے دوران چینی کاروباری اداروں اور مقامی لوگوں کی مسلسل تلاش اور کوششوں کے طور پر بھی دیکھا جاتا ہے۔ گوادر بندرگاہ 2013 سے شروع ہو ئی فرسودہ سہولیات کے ساتھ ویران ہونے پر تھی اور بندرگاہ پر کاروبار بمشکل بچا ۔ سی پیک اتھارٹی کے چیئرمین عاصم باجوہ کے ساتھ انٹرویو کے مطابق پچھلے کچھ مہینوں کے دوران ، بندرگاہ پر 67000 میٹرک ٹن سے زیادہ سامان ہینڈل کیا گیا ۔ گوادر پورٹ کی کامیاب فعالیت نے افغانستان کیساتھ ساتھ وسطی ایشیا اور روس تک تجارت کی نہ صرف بنیاد رکھی بلکہ اس سے تجارتی نیٹ ورکنگ میں وسعت بھی آئی ہے جو کہ اور گوادر گلف ایکسپریس کے آغاز کے لئے 2018 میں COPHC اور COSCO شپنگ لائنوں کے مابین ایک معاہدے پر دستخط ہوئے جسکی وجہ سے مزید توثیق کردی گئی ہے۔ اس معاہدے کی وجہ سے مینا جیبل علی ، کراچی ، قاسم ، اور ابوظہبی ، کوسکو (COSCOs)کی 16 بین الاقوامی خطوط کے ساتھ گزرنے والی بندرگاہوں کو بطور ٹرانزٹ پورٹ استعمال کیا جا سکتا ہے اور عالمی صارفین کے لئے بھی دستیاب ہونگے ، اور گوادر پورٹ دنیا کی تقریبا تمام بڑی بندرگاہوں کو جوڑ دے گی۔پورٹ اکانومی میں بنیادی ڈھانچہ کی تعمیر ہو رہی ہے۔ بندرگاہ سے محض چند میل دور واقع ، گوادر فری زون ، جو پاکستان کا پہلا جدید صنعتی پارک ہے اس سے نمایاں سرمایہ کاری اور ترقی ہو رہی ہے۔ سی او پی ایچ سی کے ایک عہدیدار نے گوادر پرو کو بتایا کہ ہوٹلوں ، بینکنگ ، لاجسٹکس ، اورسیز ویئر ہاوسز، اناج اور آئل پروسیسنگ اور فشری پروسیسنگ میں شامل 40 سے زائد کاروباری اداروں نے فری زون میں رجسٹریشن کر ئی ہے ، جس سے 90 ملین امریکی ڈالر کی مجموعی سرمایہ کاری ہوگی۔مکمل اور جدید سہولیات کے ساتھ ، فری زون 2018 سے بڑے پیمانے پر بین الاقوامی کانفرنسوں کا انعقاد کرنے کے قابل ہے ، اس نے دنیا بھر کے تاجروں ، اسکالروں اور سیاستدانوں کی مدد سے ایک بار فشری بندرگاہ کو شہر میں تبدیل کردیا ہے۔ گوادر ایکسپو 2018 ، ایشین پارلیمنٹری اسمبلی ، دوسرا گوادر بین الاقوامی اجناس میلہ ، اور گوادر ماربل اینڈ معدنیات ایکسپو نے ، دنیا کی توجہ گوادر فری زون کی طرف راغب کرتے ہوئے علاقے میں مزید کاروباری مواقع پیدا کیے ہیں اور مختلف علاقوں کے لوگوں کے مابین تبادلے کو فروغ دیا ہے۔ .فروغ پزیر بندرگاہ اور فری زون کارفرما ہے۔