چین نے 12 سالوں سے افریقہ کے سب سے بڑے تجارتی شراکت دار کے طور پر اپنی حیثیت برقرار رکھی ہے

بیجنگ (آئی این پی)چین-افریقہ تعاون کے فورم کی تاجروں کی کانفرنس چین-افریقہ تعاون کے فورم کے فریم ورک کے تحت ایک اہم معاون اقتصادی اور تجارتی سرگرمی ہے، اور یہ چینی اور افریقی کاروباری برادریوں کے درمیان اعلیٰ سطحی مکالمے اور تبادلے کا طریقہ کار ہے۔
اطلاعات کے مطابق چین نے مسلسل 12 سالوں سے افریقہ کے سب سے بڑے تجارتی شراکت دار کے طور پر اپنی حیثیت برقرار رکھی ہے۔اعدادوشمار بتاتے ہیں کہ وبائی صورتحال کے تحت افریقہ میں چین کی سرمایہ کاری بڑھی ہے، جو 2019 کے 2.71 ارب امریکی ڈالر سے بڑھ کر 2020 میں 2.96 ارب امریکی ڈالر تک پہنچ گئی۔چینی کمپنیوں کی نئی سرمایہ کاری افریقہ کے 47 ممالک پر محیط ہے اور 19 ممالک میں ان کی سرمایہ کاری میں 10 فیصد سے زیادہ اضافہ ہوا ہے۔
چائنا کونسل برائے فروغِ بین الاقوامی تجارت کی چیئرپرسن گاؤ یان نے کہا کہ افریقی ممالک کی اقتصادی ترقی اور کاروباری ماحول میں بہتری کے ساتھ افریقی مارکیٹ پر چینی کمپنیوں کے اعتماد میں مسلسل اضافہ ہوا ۔چینی کمپنیاں اپنی سماجی ذمہ داریوں کو نہیں بھولیں اور افریقہ میں چائنا کارپوریٹ سوشل ریسپانسیبلٹی الائنس قائم کیا جس نے افریقی ممالک کو کافی مدد فراہم کی ہے۔
افریقہ میں چائنا کارپوریٹ سوشل ریسپانسیبلٹی الائنس کے سیکرٹری جنرل جیانگ ہوئی نے کہا کہ افریقہ میں تقریباً 1,700 کمپنیاں اپنی سماجی ذمہ داریوں کو پورا کرنے کے لیے اس الائنس میں شامل ہوئی ہیں۔