چین کی جی ڈی پی میں پہلی3 سہ ماہیوں کے دوران9.8 فیصد اضافہ

بیجنگ(شِنہوا) چین کی معیشت نے رواں سال کی پہلی 3 سہ ماہیوں میں مستحکم بحالی جاری رکھی ہے جس میں بڑے اشاریے معقول حد میں رہے ہیں۔

پیر کے روز قومی بیورو برائے شماریات  (این بی ایس) کے اعداد و شمار کے مطابق ملک کی مجموعی ملکی پیداوار (جی ڈی پی) میں پہلی 3 سہ ماہیوں میں گزشتہ سال کی نسبت 9.8 فیصد اضافہ ہواجس سے گزشتہ 2 سالوں میں اوسط نمو 5.2 فیصد رہی۔

تیسری سہ ماہی(کیو3) میں ملک کی جی ڈی پی میں گزشتہ سال کی نسبت 4.9 فیصد اضافہ ہوا جو پہلی سہ ماہی میں 18.3 فیصد اور دوسری سہ ماہی میں 7.9 فیصد کی شرح سے سست ہے۔

دیگر بڑے معاشی اشاریوں نے ہر شعبہ میں مسلسل بہتری دکھائی، رواں سال پہلی 3 سہ ماہیوں میں صارفین کی اشیاء کی خوردہ فروخت میں گزشتہ سال کی نسبت 16.4 فیصد اضافہ ہوا۔

چین کی ویلیو ایڈڈ صنعتی پیداوار پہلی 3 سہ ماہیوں میں گزشتہ سال کی نسبت 11.8 فیصد بڑھ گئی جبکہ اس عرصے کے دوران مستقل اثاثوں پر سرمایہ کاری میں گز شتہ سال کی نسبت 7.3 فیصد اضافہ ہوا۔

قومی بیورو برائے شماریات کے اعداد و شمارکے مطابق ملک میں سروے شدہ شہری بے روزگاری کی شرح ستمبر میں 4.9 فیصد رہی جو کہ گزشتہ سال کی اسی مدت کے مقابلے میں 0.5 فیصد پوا ئنٹس کم ہے۔