اقوام متحدہ کے سربراہ کا نوول کروناوائرس سے انقلابی، جامع اور پائیدار بحالی پر زور

اقوام متحدہ(شِنہوا)اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل انتونیو گوترس نے اتوار کے روز غربت کے خاتمے اور سب کے لئے انصاف ، وقار اور مواقع پر مبنی دنیا بنانے کے لئے نوول کرونا وائرس سے انقلابی، جامع اور پائیدار بحالی پر زور دیا  ہے۔

17 اکتوبر کو منائے جانے والے غربت کے خاتمے کے عالمی دن کے موقع پر ایک پیغام میں انہوں نے کہا کہ غربت ہمارے دور کا اخلاقی جرم ہے۔ 2 دہائیوں میں پہلی بار انتہائی غربت میں اضافہ ہورہا ہے، گزشتہ سال تقریباً 12 کروڑ لوگ غربت کی لپیٹ میں آگئے جس کی وجہ نوول کروناوائرس کی عالمی وبا کا معیشتوں اور معاشروں کو تباہ کرنا ہے۔

انہوں نے کہا کہ  یک طرفہ بحالی دنیا کے شمال اور جنوب کے درمیان عدم مساوات کو مزید گہرا کر رہی ہے،یکجہتی ایسے عمل میں غائب ہے جس وقت ہمیں اس کی  سب سے زیادہ ضرورت ہے۔

ویکسین کی عدم مساوات مختلف اقسام کو پھلنے پھولنے اور تیزی سے چلنے کے قابل بنا رہی ہے جو مزید لاکھوں اموات پر دنیا کی مذمت کرتی ہے اور معاشی سست روی کو طول دے رہی ہے جس کی قیمت کھربوں ڈالرز ہوسکتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ اس غم و غصے کو ختم کرنے ، قرضوں کی پریشانی سے نمٹنے اور سب سے زیادہ ضرورت مند ممالک میں بحالی کیلئے سرمایہ کاری کو یقینی بنانے کی ضرورت ہے۔

گوترس نے کہا کہ دنیا کو عالمی بحالی کے لئے سہ رخی نقطہ نظر کی ضرورت ہے۔