سیاہ فام خاتون کی ہلاکت پر مظاہروں میں 2 امریکی پولیس افسران کو گولی مار دی گئی

نیویارک(شِنہوا) سیاہ فام امریکی شہری جارج فلائیڈ کی ہلاکت کے نتیجے میں امریکہ کے نیویارک میں بروک لین پُل پر ہونے والے احتجاج میں مظاہرین شریک ہیں۔

شکاگو(شِنہوا)کینٹکی کے شہر لوئس ویل میں سیاہ فام خاتون بیرونا ٹیلر کی موت پر ہونیوالے مظاہروں کے دوران 2 امریکی پولیس افسران کو گولی مار کر زخمی کر دیا گیا ہے۔

لوئس ویل میٹرو پولیس ڈیپارٹمنٹ( ایل ایم پی ڈی) کے قائمقام چیف رابرٹ شروئڈر نے لوئس ویل میں منعقدہ ایک نیوز کانفرنس کے دوران بتایا کہ دونوں پولیس افسران کو ایک یونیورسٹی ہسپتال بھیج دیا گیا ہے۔ جن میں سے ایک کی حالت مستحکم ہے جبکہ دوسرا سرجری کے عمل سے گزر رہا ہے۔

شرؤئڈر نے مزید معلومات دینے سے انکار کرتے ہوئے کہا کہ ایک مشتبہ شخص زیر حراست ہے۔انہوں نے کہا کہ یہ ایک انتہائی سنجیدہ اور خطرناک صورتحال ہے۔

مقامی میڈیا کی رپورٹس کے مطابق لوئس ویل شہر بھر میں مقامی وقت کے مطابق رات 9 بجے  سے کرفیو کا نفاذ کر دیا گیا ہے۔

ٹیلر کی اپنے اپارٹمنٹ میں براہ راست ہلاکت کے الزام میں 3 افسران میں سے کسی پر بھی فرد جرم عائد نہ ہونے کے باعث لوئس ویل میں بدھ کے روز دوپہر کے بعد احتجاجی مظاہرے شروع ہو گئے ہیں۔ یہ احتجاجی مظاہرے انتہائی تیزی کے ساتھ واشنگٹن ڈی سی ، نیویارک اور اٹلانٹا تک پھیل چکے ہیں۔