چین، قدرتی آفات سے نقصانات میں گزشتہ برس کی نسبت واضح کمی

بیجنگ(شِنہوا) سرکاری اعدادوشمار کے مطابق سال کے پہلے نصف حصے میں چین میں قدرتی آفات سے کم نقصان ہوا ہے جس میں اموات، لاپتہ افراد اور براہ راست معاشی نقصان میں نمایاں کمی ہوئی ہے۔

وزارت ہنگامی انتظامیہ(ایم ای ایم) نے کہاہے کہ اس دورانیہ میں ملک بھر میں تقریباً4کروڑ96لاکھ 10ہزار افراد مختلف قدرتی آفات سے متاثر ہوئے،271افراد ہلاک یا لاپتہ ہوگئے جبکہ 7لاکھ85ہزار مکانوں کو نقصان پہنچا ہے۔

وزارت کے مطابق ہلاکتوں اور لاپتہ افراد کی تعداد گزشتہ5سالوں میں اسی عرصے کی نسبت 32.4فیصد کم ہوئی ہے۔

ایم ای ایم کے اعدادوشمار کے مطابق معیشت کو براہ راست 81.24 ارب یوآن (تقریباً11.62ارب امریکی ڈالرز)نقصان ہوا ہے جوکہ گزشتہ 5سالوں میں اسی عرصے کی نسبت 16.9فیصد کم ہے۔

چین بنیادی طور پر جنوری سے جون کے دوران سیلاب،طوفانی بارشوں اور ارضیاتی آفات کا شکار رہاہے جبکہ جنگلات میں آتشزدگی، زلزلوں، قحط سالی، کم درجہ حرارت اور برفباری کی آفات نے مختلف علاقوں کو متاثر کیا۔

سیلاب میں ہلاک یا لاپتہ ہونے والے لوگوں کی تعداد گزشتہ 5سالوں میں اسی عرصے کے دوران کی تعداد کی نسبت اوسطاً 43فیصد کم ہے جبکہ ملک کی جانب سے جنگلات میں آتشزدگی پر قابو پانے کیلئے اقدامات کرنے کے باعث جنگلات اور سبز علاقوں میں آتشزدگی کے واقعات گزشتہ 10سالوں  کی کم ترین سطح پر ہیں۔