وبائی امراض کی صورتحال بہتر نہ ہوئی تو کابینہ تحلیل ہوسکتی ہے، قازقستان کے صدرکا انتباہ

نور- سلطان (شِنہوا) قازقستان کے صدر قاسم -جومارت توقایف نے متنبہ کیا کہ اگرکوویڈ-19وبا کی صورتحال میں بہتری نہ آئی تو  ملک کی کابینہ کو تحلیل یا اس میں ردوبدل کیا جاسکتا ہے۔ اس بات کا اعلان  صدارتی پریس سروس نے جمعہ کو کیا۔

توقایف  نے ان خیالات کا اظہار ویڈیو کانفرنس کے ذریعے ہونے والے  سرکاری اجلاس میں  کیا جس میں توسیع کی گئی ہے۔

توقایف نے کہا  کہ  انہیں امید ہے کہ صورت حال دو ہفتوں میں بہتر ہوجائے گی۔ بصورت دیگر حکومت کا موجودہ شکل میں کام جاری رکھنا ایک سوال ہوگا اور یہ کہ وبا کی موجودہ صورتحال ہر ایک کے لئے تشویش کا باعث ہے۔

توقایف  نے کہا کہ وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے میں ناکامی پر تمام علاقائی گورنرز اور کئی ایک وزرا اس بات کے مستحق ہیں کہ ان کی سرزنش کی جائے۔

 صدر نے کہا کہ ہم  حالت جنگ میں ہیں۔ لہذا  ہر رہنما کے لئے ضروری ہے  کہ وہ معاملات کو حل کرنے اور ذمہ داریوں کو پورا کرنے میں زیادہ سے زیادہ اہلیت کا مظاہرہ کرے۔آپ ذمہ داریوں سے راہ فرار اختیار نہیں کرسکتے آ پ کو بیوروکریسی میں شامل ہونا چاہیئے۔

توقایف  نے مزید کہا کہ حکومت کوویڈ- 19 کے خلاف جنگ میں 150 ارب تنگے (36کروڑ50لاکھ امریکی ڈالر) مختص کرے گی۔

 قازقستان میں جمعہ تک کوویڈ-19 کے  54 ہزار747  مصدقہ کیسز اور   264 ہلاکتیں رپورٹ ہوچکی ہیں۔گزشتہ 24 گھنٹے میں 1ہزار700 سے زائد نئے کیسز رپورٹ ہوئے۔