دورہ انگلینڈ بابراعظم کی کپتانی کا امتحان ہے،شاہد آفریدی

کراچی (آئی این پی)قومی ٹیم کے سابق کپتان شاہد آفریدی نے کہا ہے کہ دورہ انگلینڈ بابر اعظم کی قائدانہ صلاحیتوں کا امتحان ہے اور دیگر کھلاڑیوں پر بھی بھاری ذمہ داری ہے جن کے تعاون سے نوجوان کپتان مطلوبہ نتائج حاصل کر سکیں گے ۔ انہوں نے کہا کہ بابر اعظم بیٹنگ لائن میں ریڑھ کی ہڈی کی مانند ہیں اور خواہش ہے کہ وہ اچھی کارکردگی کا سلسلہ جاری رکھیں۔ انہوں نے کہا کہ کورونا وائر س کے باعث شائقین کے بغیر میچوں کے انعقاد میں مسئلہ نہیں ، انگلینڈ کیخلاف پاکستانی ٹیم ٹیسٹ سیریز خالی گراو¿نڈ میں کھیلے گی تو یہ قومی کھلاڑیوں کیلئے نئی بات نہیں ہے کیونکہ بیشتر ڈومیسٹک میچوں میں شائقین موجود نہیں ہوتے اس لئے وہ خالی گراو¿نڈ میں کھیلنے کے عادی ہیں تاہم ون ڈے اور ٹی ٹونٹی کرکٹ میں مداحوں کی عدم موجودگی سے ضرور فرق پڑے گا کیونکہ یہ ٹیسٹ کرکٹ کے مقابلے میں نسبتاً تیز فارمیٹس ہیں جس میں کھلاڑیوں کے اندر جوش و جذبے اور توانائی کی ضرورت ہوتی ہے اور شائقین کی حوصلہ افزائی کھلاڑیوں کو اچھی کارکردگی پر اکساتی ہے تاہم جو کھلاڑی کراو¿ڈ میں دباو¿ محسوس کرتے ہیں ان کیلئے موقع ہے کہ وہ خالی گراو¿نڈ میں اچھی کارکردگی کا مظاہرہ کریں ۔ذاتی طور پر یہ خیال ہے کہ شائقین کے بغیر کرکٹ کا مزہ نہیں ہے ۔ ایک سوال پر انہوں نے کہا کہ انٹر نیشنل کرکٹ کا دباو¿ آسان نہیں ہوتا اس لئے کھلاڑی کو اندر سے مضبوط ہونا چاہئے جب ہی وہ گراو¿نڈ میں اچھی کارکردگی دکھا سکتا ہے ۔ذاتی طور پر ہمیشہ بھارت اور آسٹریلیا کے خلاف میچز کھیل کر مزہ آیا۔ شاہد آفریدی نے ایک مرتبہ پھر کہا کہ کرکٹ کو کرپشن سے پاک کرنے کیلئے سخت قوانین نافذ کئے جائیں۔انہوں نے کہا کہ کھیل میں بدعنوانی روکنے کیلئے چند کھلاڑیوں کو سزا دے کر مثال قائم کرنے کی ضرورت ہے جس سے دوسرے کھلاڑی غلط حرکات میں ملوث ہونے سے دور رہیں گے ۔ ورلڈ کپ 2011ئ میں میچ فکسنگ کے دعوے پر شاہد آفریدی کا کہنا تھا کہ اس معاملے کو اٹھانے میں کافی دیر کی گئی تاہم کھیل میں کرپشن برداشت نہیں کی جا سکتی ۔