خواجہ آصف نے نااہلی کا فیصلہ سپریم کورٹ میں چیلنج کردیا

اسلام آباد(آئی این پی ) پاکستان مسلم لیگ(ن)کے سینئر رہنما اور سابق وزیر خارجہ خواجہ آصف نے اپنی نااہلی کا فیصلہ سپریم کورٹ میں چیلنج کر تے ہوئے موقف اختیار کیا ہے کہ کاغذات نامزدگی میں بیرون ملک کا بینک اکانٹ غیر اداری طور پر ظاہر نہ کر سکا ،نااہلی رٹ دائر ہونے سے قبل بینک اکا ؤ نٹ اور اقامہ ظاہر کر چکا تھا ، اسلام آباد ہائیکورٹ نے بغیر شواہد غیر فعال بینک اکا ؤ نٹ کو ظاہر نہ کرنا بدنیتی قرار دے دیا،ہائیکورٹ نے قیاس آرائیوں پر مبنی فیصلہ دیدیا۔ بدھ کو سابق وزیر خارجہ خواجہ آصف نے اپنی نااہلی کے خلاف سپریم کورٹ میں اپیل دائر کرتے ہوئے اسلام آباد ہائیکورٹ کا فیصلہ اور الیکشن کمیشن کا نوٹیفکیشن کالعدم کرنے کی درخواست کی۔خواجہ آصف نے موقف اختیار کیا کہ وہ اپنے کاغذات نامزدگی میں بیرون ملک کا بینک اکا ؤ نٹ غیر اداری طور پر ظاہر نہ کر سکے، اس بینک اکا ؤنٹ میں کاغذات نامزدگی کے ڈیکلیئرڈ اثاثوں کی 0.5 فیصد رقم تھی، تاہم نااہلی کی رٹ دائر ہونے سے قبل وہ بینک اکا ؤ نٹ اور اقامہ ظاہر کر چکے تھے۔خواجہ آصف نے درخواست میں کہ اسلام آباد ہائیکورٹ نے بغیر شواہد غیر فعال بینک اکا ؤ نٹ کو ظاہر نہ کرنا بدنیتی قرار دے دیا، حالانکہ خود سے اکانٹ ظاہر کرنے کے عمل کو بدنیتی نہیں کہا جا سکتا، اسلام آباد ہائیکورٹ کے فیصلے میں ملکی اور متحدہ عرب امارات کے قوانین کو مدنظر نہیں رکھا گیا، ہائیکورٹ نے درخواست گزار کے رویئے کو بھی سامنے رکھنا ہوتا ہے، درخواست گزار تحریک انصاف کے رہنما عثمان ڈار نے ہائیکورٹ سے حقائق چھپائے۔