قومی اسمبلی میں حکومت سادہ اکثریت ثابت کرنے میں ناکام ہو گئی

اسلام آباد(آئی این پی)قومی اسمبلی میں حکومت سادہ اکثریت ثابت کرنے میں ناکام ہو گئی،حکومت نے عددی اکثریت پر بجٹ منظور کروایا، حکومت کو سادہ اکثریت کیلئے172ووٹ درکار تھے جبکہ حکومت صرف 160ووٹ حاصل کرسکی۔بجٹ منظوری کے اہم موقع پر حکومت کے 12،اتحادی شیخ رشید احمد ،جی ڈی اے کے غوث بخش مہر،ایم کیو ایم کے اقبال محمد علی اور مسلم لیگ(ق) کی خاتون رکن غیر حاضر رہیں۔اپوزیشن کے بھی 161میں سے42ارکان غیر حاضر رہے، حیران کن طور پر فنانس بل پر ووٹنگ کے دوران 15ارکان نے پارلیمنٹ میں موجود ہونے کے باوجود ووٹنگ میں حصہ نہ لیا۔پیر کو قومی اسمبلی کا اجلاس سپیکر اسد قیصر کی زیر صدارت ہوا جس میں فنانس بل 2020-21کی منظوری دی گئی ۔ قومی اسمبلی سیکرٹریٹ کی جانب سے جاری حاضری کے مطابققومی اسمبلی کے اہم اجلاس میں 342ارکان پر مشتمل ایوان میں 294ارکان نے شرکت کی جبکہ 46ارکان غیر حاضر رہے ۔بجٹ کی منظوری کے دوران حکومت نے160جبکہ اپوزیشن نے119ووٹ حاصل کئے۔اہم اجلاس میں پاکستان پیپلزپارٹی کے آصف علی زرداری سمیت11،پاکستان مسلم لیگ (ن) کے شہباز شریف سمیت 13،ایم ایم اے کے 4،اے این پی کے امیر حیدر خان ہوتی، بی این پی مینگل کے سربراہ سردار اختر مینگل غیر حاضر رہے جبکہ پاکستان تحریک انصاف کے 12،حکومتی اتحادی شیخ رشید احمد ، جی ڈی اے کے غوث بخش مہر، ایم کیو ایم کے اقبال محمد علی اورپاکستان مسلم لیگ (ق) کی خاتون رکن مسز فرخ خان غیر حاضر رہیں ۔ قومی اسمبلی میں بی این پی مینگل کی علیحدگی کے بعد حکومت اور اس کے اتحادی جماعتوں کے ارکان کی مجموعی تعداد 180ہے جس میں سے حکومت کو بجٹ منظوری کے دوران 160ووٹ ملے ، اسی طرح ایوان میں اپوزیشن جماعتوں کے ارکان کی تعداد161ہے جبکہ اپوزیشن کو بجٹ منظوری کے دوران 119ووٹ ملے ، حکومت کو 20جبکہ اپوزیشن کو 42ووٹ کم پڑے ،342ارکان پر مشتمل ایوان میں حکومت کو سادہ اکثریت کیلئے 172ارکان کی حمایت درکار ہوتی ہے مگر بجٹ منظوری کے دوران اہم موقع پر حکومت کو 160ووٹ ملے ۔ پاکستان تحریک انصاف کے غیر حاضر رہنے والے ارکان میں این اے 47سے منتخب ہونے والے جواد حسین ،این اے55اٹک سے منتخب ہونے والے طاہر صادق خان ، این اے 85سے منتخب ہونے والے حاجی امتیاز احمد چوہدری، این اے91سے منتخب ہونے والے عامر سلطان چیمہ ، این اے 119سے منتخب ہونے والے راحت امان اللہ بھٹی ، این اے 140سے منتخب ہونے والے سردار طالب حسن نکئی ، این اے 170سے منتخب ہونے والے فاروق اعظم ملک ، این اے 185سے منتخب ہونے والے مخدوم زادہ سید باسط احمد سلطان ،این اے 193سے منتخب ہونے والے سردار جعفر خان لغاری ، این اے 194سے منتخب ہونے والے نصر اللہ خان دریشک،آزاد رکن علی نوازشاہ ، این اے 245سے منتخب ہونے والے عامر لیاقت ،تحریک انصاف کی خاتون رکن سیمی بخاری ایوان سے غیر حاضر رہیں۔حکومتی اتحادی جماعت گرینڈ ڈیموکریٹک الائنس(جی ڈی اے) کے غوث بخش مہر،ایم کیو ایم کے اقبال محمد علی اور عوامی مسلم لیگ کے شیخ رشید احمد بھی ایوان سے غیر حاضر رہے۔ قومی اسمبلی سیکرٹریٹ کی جانب سے جاری حاضری کے مطابق پیر کو 294حکومتی و اپوزیشن ارکان نے قومی اسمبلی اجلاس میں شرکت کی مگر حیران کن طور پر فنانس بل پر ووٹنگ کے دوران مجموعی طور پر 279ارکان نے ووٹنگ میں حصہ لیا جس میں حکومت و اتحادی جماعتوں کے160جبکہ اپوزیشن کے119ارکان شامل تھے جبکہ15ارکان نے پارلیمنٹ میں موجود ہونے کے باوجود ووٹنگ کے دوران ایوان میں موجود نہیں تھے۔(ر ڈ)