لوک ورثہ کرپشن ریفرنس، سینیٹر روبینہ خالد اور شریک ملزمان پر فرد جرم عائد

عدالت کا نیب کو آئندہ سماعت پر ملزمان کے خلاف شہادتیں پیش کرنے کا حکم
اسلام آباد(آئی این پی ) احتساب عدالت نے لوک ورثہ کرپشن ریفرنس میں پیپلز پارٹی کی سینیٹر روبینہ خالد اور شریک ملزمان پر فرد جرم عائد کر دی،ملزمان پر 30 ملین کا قومی خزانے کو نقصان پہنچانے کا الزام ہے،سینیٹر روبینہ خالد اور دیگر ملزمان نے صحت جرم سے انکار کردیا ۔ جمعہ کو احتساب عدالت اسلام آباد کے جج محمد بشیر نے لوک ورثہ کرپشن ریفرنس کی سماعت کی۔ پیپلز پارٹی کی سینیٹر روبینہ خالد اور لوک ورثہ کے سابق افسران مظہرالسلام، تابندہ ظفر اور محمد شفیع عدالت میں پیش ہوئے احتساب عدالت نے لوک ورثہ کرپشن ریفرنس میں پیپلز پارٹی کی سینیٹر روبینہ خالد اور شریک ملزمان پر فرد جرم عائد کر دی۔ عدالت نے نیب کو آئندہ سماعت پر ملزمان کے خلاف شہادتیں پیش کرنے کا حکم دے دیا۔ روبینہ خالد، مظہر الا سلام، تابندہ ظفر اور محمد شفیع نے صحت جرم سے انکار کر دیا۔ ملزمان پر لوک ورثہ کے فنڈز میں خورد برد کا الزام ہے، ملزمان پر 30 ملین کا قومی خزانے کو نقصان پہنچانے کا الزام ہے۔ عدالت نے ریفرنس کی سماعت 4 ستمبر تک ملتوی کر دی۔