چین کا امریکہ سے ایران کے خلاف تمام غیر قانونی پابندیاں ختم کرنے کا مطالبہ

فائل فوٹو میں امریکہ کے دارالحکومت واشنگٹن میں چین (دائیں )اور امریکہ کے قومی پرچموں کو دکھایا گیا ہے(شِنہوا)

ویانا (شِنہوا)ایک  چینی  مندوب نے ویانا میں ایرانی جوہری معاہدہ پرمذاکرات بحال ہونے کے موقع پر  امریکہ سے ایران پرعائد تمام  پابندیاں ختم کرنے اور چین سمیت دوسرے ممالک کے تھرڈ پارٹی اداروں اور افراد کے خلاف مقامی عدالتوں کا دائرہ اختیار ختم کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

چین،فرانس،جرمنی،روس،برطانیہ ایران کے اعلیٰ سفارتکاروں نے ویانا میں  بند کمرے میں ملاقات کی۔اجلاس کا سرفہرست ایجنڈا ایران کے خلاف عائد پابندیوں کا خاتمہ اور جوہری اقدامات پر عملدرآمد تھا۔

جوہری معاہدے کو بچانے کے لئے امریکی نمائندوں کی ویانا میں موجودگی سے مشترکہ جامع عمل منصوبے( جے سی پی اواے) جسے ایرانی جوہری معاہدہ بھی کہا جاتا ہے پر مشترکہ کمیشن کے اجلاس کو عوامی توجہ حاصل ہوئی۔

ویانا میں اقوام متحدہ اور دیگر بین الاقوامی اداروں کے لئے چینی مندوب وانگ چھون نے اجلاس کے بعد کہا کہ امریکہ کو تہران کے خلاف تمام غیر قانونی پابندیاں ختم اورایران کو2015 کے جوہری معاہدہ کی بنیاد پر اپنی ذمہ داریوں پر مکمل عمل شروع کرنا چاہئے۔

وانگ نے کہا کہ معاہدے سے امریکہ کی دستبرداری اور ایران کے خلاف اس کا زیادہ سے زیادہ دباؤ موجودہ صورتحال کی اصل وجہ ہے۔اس لئے امریکہ کی معاہدے میں جلد ازجلد واپسی اس مسئلہ کا بنیادی حل ہے۔